PDA

View Full Version : فیسبک بھی تو کافروں نے بنایا ہے، یہ بھی استعمال نہ کرو پھر۔۔



MazharShafiq
01-04-2019, 04:43 PM
یہ جملہ اکثر لوگوں سے اس وقت سننے کو ملتا ہے جب انہیں فیسبک پر کسی برے کام سے رکنے کی دعوت دی جائے اور ان کو وہ بات پسند نہ آئے اور اکثر ان لوگوں سے سنی جاتی ہے جنہیں دین کا علم کچھ خاص نہیں ہوتا ۔۔۔

جواب:
_____

اسلام ہماری زندگیاں آسان بنانے کے لیے آیا ہے نہ کہ مشکل بنانے کے لیے، یہ بات ہم جیسے ٹوٹے پھوٹے مسلمان کیا جانیں، کوئی جا کر پوچھے ساڑھے چودہ سو سال پہلے لوگ کیسے جی رہے تھے ۔۔۔

اسلام نے ہمیں کافروں کی بنائی ہوئی چیزوں سے منع کیا ہی نہیں ہے ! اسلام نے تو کافروں کے ساتھ مشابہت اختیار کرنے سے منع کیا ہے۔۔۔۔

اسلام نے کافروں کی جن چیزوں کو استعمال کرنے سے منع کیا ہے وہ ایسی ہیں کہ جن سے اللہ کی واحدانیت، رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی رسالت، یا اسلام کے دینِ حق ہونے کا انکار ہوتا ہے یا ان چیزوں پر کوئی سمجھوتہ ہوتا ہو۔۔۔

فیسبک، ٹیکنالوجی، لگثری۔۔۔۔ ان کو استعمال کرنے سے دین پر بلکل کوئی سمجھوتہ نہیں ہورہا۔۔ بلکہ یہ تو دعوت کے لیے بھی استعمال ہو سکتی ہیں۔۔۔ اور جب کہیں سمجھوتہ ہو رہا ہو تو ان کو چھوڑ دینا چاہیے !

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے یہود و نصاریٰ کی مخالفت کے لیے داڑھی بڑھانے اور موچھیں کٹوانے کا حکم دیا، جوتے پہن کر نماز پڑھنے کا بھی حکم دیا، عاشورہ کے ساتھ ایک ایکسٹرا روزہ رکھنے کا بھی حکم دیا ۔۔۔

کیوں ؟ تاکہ یہود و نصاریٰ سے الگ پہچان ہو مسلمانوں کی۔۔ ان کے ساتھ کہیں ہم مکس نہ ہو جائیں ، تو ایسی باتوں کا حکم دیا جو مکس ہونے نہ دیں گی۔۔۔

مطلب یہ ہے کہ کافروں سے دوستی نہ کی جائے۔۔۔ لیکن اس کا مطلب یہ نہیں کہ ان کی شکل بھی نہ دیکھی جائے یا ان کی بنائی ہوئی چیزوں کو ہاتھ نہ لگایا جائے۔۔

بلکہ کرنا یہ ہے کہ جو حدود اسلام نے بتا دی ہیں ان کے مطابق جہاں جہاں ان سے منفرد رہنے کا حکم ہے وہاں اجتناب کیا جائے اور جہاں اجازت ہے وہاں کوئی حرج نہیں۔۔۔

ہم مسلمان ہیں ناں ؟ ہمیں تو کرنا وہ ہی ہے جو اللہ اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا حکم ہو۔۔ چاہے بات سمجھ میں آئے یا نہ آئے۔۔۔

جہاں تک بات ہے کہ " یہ بھی تو بدعت ہے ! " ۔۔۔ تو بدعت کے متعلق بنیادی باتیں جان لیں تو خود سمجھ جائیں گے ان شاء اللہ ۔۔۔

دین میں ایجاد کردہ نیا طریقہ جس پر عمل کرنے سےاجرو ثواب اور اللہ کا قرب حاصل کرنا مقصود ہو بدعت کہلاتا ہے ۔۔۔ بدعت وہ طریقہ اور عمل ہے جو نہ قرآن میں آیا نہ نبی کر یم صلی اللہ علیہ وسلم نے سکھایا اور نہ صحابہ کے دور میں پایا گیا ۔۔۔ دنیاوی ایجادات مثلا سائیکل موٹر سائیکل کارمذموم بدعت میں شامل نہیں،کیونکہ سائیکل کا مقصد عبادت کرنا نہیں بلکہ دنیاوی ضرورت پوری کرنا ہے.

جس نئے کام کو عبادت اور دین کا حصہ سمجھتے ہوئے کریں گے وہ بدعت میں شمار ہو گا ۔۔۔۔ مثلا پانچ نمازوں میں چھٹی ایجاد کرنا,اورچار رکعتوں میں پانچویں کا اضافہ کرنا بدعت ہے.
Reply

Login/Register to hide ads. Scroll down for more posts
azc
01-04-2019, 05:32 PM
مختصر یہ کہ کفار کی ایجادکردہ کوئ چیز یا طریقہ جسکا تعلق انکے دین سے ہو کو اختیار کرنا منع ہیے
Reply

Hey there! Looks like you're enjoying the discussion, but you're not signed up for an account.

When you create an account, you can participate in the discussions and share your thoughts. You also get notifications, here and via email, whenever new posts are made. And you can like posts and make new friends.
Sign Up

Similar Threads

  1. Replies: 1
    Last Post: 10-18-2018, 06:27 PM
HeartHijab.com | Hijab Sale | Pound Shop | International Institute of Entrepreneurship and Professional Development - IIEPD | Truly Halal Humour

IslamicBoard

Experience a richer experience on our mobile app!