× Register Login What's New! Contact us
Results 1 to 2 of 2
  1. #1
    MazharShafiq's Avatar
    Join Date
    Sep 2016
    Location
    Pakistan
    Gender
    Male
    Religion
    Islam
    Posts
    980
    Threads
    55
    Reputation
    1002
    Rep Power
    21
    Likes (Given)
    70
    Likes (Received)
    215

    معراج کا قصہ۔۔

    Report bad ads?

    سیدنا مالک بن صعصعہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ اللہ کے نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے ان (صحابہ) سے معراج کی رات کا قصہ بیان فرمایا: “ میں حطیم (یا یوں کہا کہ) حجر میں لیٹا ہوا تھا کہ اتنے میں ایک آنے والا (فرشتہ) آیا تو اس نے یہاں سے یہاں تک چیر ڈالا۔ راوی کہتے ہیں کہ اس کا مطلب یہ ہے کہ سینے کے سرے سے ناف تک (چیرا)۔ میرا دل نکالا پھر ایک سونے کا طشت لایا گیا جو ایمان سے بھرا ہوا تھا اس سے میرا دل دھویا گیا پھر اسے اس کی جگہ پر رکھ دیا گیا پھر میرے لیے ایک سفید جانور لایا گیا جو خچر سے ذرا نیچا اور گدھے سے کچھ اونچا تھا حضرت انس رضی اللہ عنہ سے پوچھا گیا ابوحمزہ! کیا یہ جانور براق تھا؟ آپ نے فرمایا کہ ہاں۔ (نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: “ ) وہ اپنا قدم وہاں رکھتا تھا جہاں تک اس کی نگاہ پہنچتی تھی، پس میں اس پر سوار کیا گیا اور جبرائیل علیہ السلام میرے ساتھ چلے یہاں تک کہ آسمان دنیا پر پہنچے تو جبرائیل علیہ السلام نے کہا کہ دروازہ کھولو! پوچھا گیا کہ یہ کون ہے؟ کہا کہ جبرائیل علیہ السلام ہوں، کہا گیا کہ تیرے ساتھ اور کون ہے؟ کہا کہ محمد ( صلی اللہ علیہ وسلم ہیں)۔ کہا گیا کہ کیا وہ بلائے گئے ہیں؟ انھوں نے کہا ہاں تو کہا گیا کہ مرحبا خوب آئے اور دروازہ کھولا گیا، میں اندر گیا تو دیکھا کہ آدم علیہ السلام وہاں ہیں جبرائیل علیہ السلام نے کہا کہ یہ تمہارے باپ آدم علیہ السلام ہیں، انھیں سلام کرو، میں نے انہیں سلام کیا تو انھوں نے سلام کا جواب دیا اور کہا کہ کیا اچھا بیٹا اور کیا اچھا نبی ہے، پھر (ہم) اوپر چڑھے یہاں تک کہ دوسرے آسمان تک پہنچے تو وہاں بھی جبرائیل علیہ السلام نے کہا کہ دروازہ کھولو! پوچھا گیا کہ کون ہے؟ کہا کہ جبرائیل علیہ السلام (ہوں) کہا گیا کہ تیرے ساتھ اور کون ہے؟ کہا کہ محمد ( صلی اللہ علیہ وسلم ) کہا گیا کہ کیا وہ بلائے گئے ہیں؟ انھوں نے کہا ہاں تو کہا گیا کہ مرحبا خوب آئے اور دروازہ کھولا گیا، میں اندر گیا تو دیکھا کہ وہاں یحییٰ علیہ السلام اور عیسیٰ علیہ السلام دونوں خالہ زاد بھائی بیٹھے ہوئے ہیں جبرائیل علیہ السلام نے کہا کہ یہ یحییٰ علیہ السلام اور عیسیٰ علیہ السلام ہیں انھیں سلام کرو میں نے انھیں سلام کیا تو انھوں نے سلام کا جواب دیا اور کہا کہ مرحبا اچھا بھائی ہے اور اچھا پیغمبر ہے۔ پھر جبرائیل علیہ السلام میرے ساتھ اوپر تیسرے آسمان تک چڑھے تو وہاں بھی جبرائیل علیہ السلام نے کہا کہ دروازہ کھولو! پوچھا گیا کہ یہ کون ہے؟ کہا کہ جبرائیل علیہ السلام (ہوں) کہا گیا کہ تیرے ساتھ اور کون ہے؟ کہا کہ محمد ( صلی اللہ علیہ وسلم )۔ کہا گیا کہ کیا وہ بلائے گئے ہیں؟ انھوں نے کہا ہاں تو کہا گیا کہ مرحبا خوب آئے اور دروازہ کھولا گیا، میں اندر گیا تو دیکھا کہ وہاں یوسف علیہ السلام ہیں، جبرائیل علیہ السلام نے کہا کہ یہ یوسف علیہ السلام ہیں، جبرائیل علیہ السلام نے کہا کہ یہ یوسف علیہ السلام ہیں انھیں سلام کرو، میں نے انھیں سلام کیا تو انھوں نے سلام کا جواب دیا، پھر کہا کہ مرحبا اچھا بھائی ہے اور اچھا نبی ہے، پھر جبرائیل علیہ السلام میرے ساتھ چوتھے آسمان تک چڑھے اور کہا کہ دروازہ کھولو! پوچھا گیا کہ کون ہے؟ کہا کہ جبرائیل علیہ السلام (ہوں) کہا گیا کہ تیرے ساتھ اور کون ہے کہا کہ محمد ( صلی اللہ علیہ وسلم ہیں)۔ کہا گیا کہ کیا وہ بلائے گئے ہیں؟ انھوں نے کہا ہاں تو کہا گیا کہ مرحبا! خوب آئے اور دروازہ کھولا گیا۔ میں اندر گیا تو دیکھا کہ وہاں ادریس علیہ السلام ہیں، جبرائیل نے کہا کہ یہ ادریس علیہ السلام ہیں انھیں سلام کرو، میں نے انھیں سلام کیا، انھوں نے جواب دیا پھر کہا کہ اچھے بھائی اور اچھے نبی کو مرحبا۔ پھر جبرائیل علیہ السلام میرے ساتھ پانچویں آسمان تک چڑھے اور کہا کہ دروازہ کھولو! پوچھا گیا کہ کون ہے؟ کہا کہ جبرائیل علیہ السلام (ہوں)۔ کہا گیا کہ تیرے ساتھ اور کون ہے؟ کہا کہ محمد ( صلی اللہ علیہ وسلم ہیں)۔ کہا گیا کہ کیا وہ بلائے گئے ہیں؟ انھوں نے کہا ہاں تو کہا گیا کہ مرحبا خوب آئے اور دروازہ کھولا گیا۔ میں اندر گیا تو دیکھا کہ وہاں ہارون علیہ السلام ہیں۔ جبرائیل علیہ السلام نے کہا کہ یہ ہارون ہیں، انھیں سلام کرو، میں نے انھیں سلام کیا تو انھوں نے جواب دیا پھر کہا کہ مرحبا کیا اچھا بھائی ہے اور کیا اچھا نبی۔ پھر جبرائیل علیہ السلام میرے ساتھ چھٹے آسمان تک چڑھے اور کہا کہ دروازہ کھولو! پوچھا گیا کہ کون ہے؟ کہا کہ جبرائیل علیہ السلام (ہوں) کہا گیا کہ تیرے ساتھ اور کون ہے؟ کہا کہ محمد ( صلی اللہ علیہ وسلم ہیں)۔ کہا گیا کہ کیا وہ بلائے گئے ہیں؟ انھوں نے کہا ہاں تو کہا گیا کہ مرحبا! خوب آئے اور دروازہ کھولا گیا، میں اندر گیا تو دیکھا کہ وہاں موسیٰ علیہ السلام ہیں، جبرائیل علیہ السلام نے کہا کہ یہ موسیٰ علیہ السلام ہیں انھیں سلام کرو۔ میں نے انھیں سلام کیا تو انھوں نے جواب دیا پھر کہا کہ مرحبا! کیا اچھا بھائی ہے اور کیا اچھا نبی ہے۔ جب میں وہاں سے آگے بڑھا تو وہ رونے لگے۔ ان سے کہا گیا کہ آپ کیوں رو رہے ہیں؟ تو انھوں نے کہا کہ میں اس لیے روتا ہوں کہ یہ لڑکا میرے بعد (دنیا میں) نبی بنا کر بھیجا گیا اور اس کی امت کے لوگ میری امت سے زیادہ (تعداد میں) جنت میں داخل ہوں گے۔ پھر جبرائیل علیہ السلام میرے ساتھ ساتویں آسمان تک چڑھے اور کہا کہ دروازہ کھولو پوچھا گیا کہ کون ہے؟ کہا کہ جبرائیل علیہ السلام (ہوں)۔ کہا گیا کہ تیرے ساتھ اور کون ہے؟ کہا کہ محمد ( صلی اللہ علیہ وسلم ہیں)۔ کہا گیا کہ وہ بلائے گئے ہیں؟ انھوں نے کہا ہاں تو کہا گیا کہ مرحبا خوب آئے اور دروازہ کھولا گیا۔ میں اندر گیا تو دیکھا کہ وہاں ابراہیم علیہ السلام ہیں، جبرائیل علیہ السلام نے کہا کہ یہ تمہارے باپ ابراہیم علیہ السلام ہیں، انھیں سلام کرو، میں نے انھیں سلام کیا تو انھوں نے جواب دیا اور کہا کہ مرحبا کیا اچھا بیٹا ہے اور کیا اچھا نبی۔ پھر مجھے سدرۃالمنتہیٰ تک بلند کیا گیا تو (دیکھا کہ) اس کے پھل (بیر) (مدینہ کے قریب مقام) ہجر کے مٹکوں کے برابر کے ہیں اور اس کے پتے ہاتھی کے کانوں کی طرح ہیں۔ جبرائیل علیہ السلام نے کہا کہ یہ سدرۃالمنتہیٰ ہے۔ (میں نے دیکھا کہ) وہاں (اس کی جڑ) سے چار نہریں نکل رہی ہیں، دو نہریں بند (ڈھانپی ہوئی) ہیں اور دو کھلی (ظاہر) ہیں۔ میں نے کہا کہ اے جبرائیل! یہ کیسی نہریں ہیں؟ انھوں نے کہا کہ بند نہریں تو جنت میں (بہہ رہی) ہیں اور کھلی دو نہریں (دنیا میں) نیل اور فرات (ہیں)، پھر مجھے بیت المعمور بلند کر کے دکھایا گیا، جہاں روزانہ ستر ہزار فرشتے داخل ہوتے ہیں، پھر میرے سامنے ایک پیالہ شراب کا اور ایک دودھ کا اور ایک شہد کا بھرا ہوا لایا گیا تو میں نے دودھ کا پیالہ لے (کر پی) لیا۔ جبرائیل علیہ السلام نے کہا کہ یہ اسلام کی فطرت ہے جس پر تم ہو اور تمہاری امت ہے پھر مجھ پر ہر دن رات میں پچاس نمازیں فرض کی گئیں۔ پس میں لوٹ کر آیا اور موسیٰ علیہ السلام کے پاس سے گزرا تو انھوں نے کہا کہ تجھے کیا حکم ملا؟ میں نے کہا کہ ہر دن رات میں پچاس نمازوں کا حکم ہوا ہے، انھوں نے کہا کہ بیشک تمہاری امت ہر روز پچاس نمازیں نہیں پڑھ سکتی اور اللہ کی قسم میں ان لوگوں پر تجربہ کر چکا ہوں اور میں نے بنی اسرائیل پر بہت زیادہ کوشش کی ہے، پس تم اپنے رب کے پاس جاؤ اور اپنی امت کے لیے تخفیف کا سوال کرو۔ پس میں لوٹا اور اللہ نے دس نمازیں مجھے معاف کر دیں۔ پھر میں لوٹ کر موسیٰ علیہ السلام کے پاس آیا تو انھوں نے پھر ویسا ہی کہا (جیسا پہلے کہا تھا) تو میں پھر لوٹ کر گیا تو دس نمازیں اور کم کر دی گئیں۔ میں لوٹ کر موسیٰ علیہ السلام کے پاس آیا تو انھوں نے پھر ویسا ہی کہا تو میں پھر لوٹ گیا تو دس نمازیں اور کم کر دی گئیں پھر میں موسیٰ علیہ السلام کے پاس آیا تو انھوں نے ویسا ہی کہا تو میں پھر لوٹ کر گیا اور دس نمازیں اور کم کر دی گئیں اور مجھے ہر روز دس نمازوں (کے پڑھنے) کا حکم دیا گیا پھر میں موسیٰ علیہ السلام کے پاس آیا تو انھوں نے پھر ویسا ہی کہا تو میں پھر لوٹ گیا تو مجھے ہر روز پانچ نمازوں (کے پڑھنے) کا حکم دیا گیا، میں موسیٰ علیہ السلام کے پاس لوٹ کر آیا تو انھوں نے کہا کہ کیا حکم ہوا ہے؟ میں نے کہا کہ مجھے ہر روز پانچ نمازیں پڑھنے کا حکم ہوا ہے تو انھوں نے کہا کہ بیشک تمہاری امت سے ہر روز پانچ نمازیں نہ پڑھی جا سکیں گی اور بیشک میں ان لوگوں پر تجربہ کر چکا ہوں اور میں نے بنی اسرائیل پر بہت زیادہ کوشش کی ہے پس تم اپنے پروردگار کے پاس لوٹ جاؤ اور اپنی امت کے لیے تخفیف کا سوال کرو تو میں نے کہا کہ میں اپنے پروردگار سے تخفیف کا سوال کرتے کرتے شرمندہ ہو گیا، میں اسی پر راضی ہوں اور (اپنے رب کا حکم) مان لیتا ہوں۔ پھر فرمایا: “ جب میں آگے بڑھا تو ایک پکارنے والے نے پکارا کہ جو میرا ٹھہراؤ تھا وہ میں نے جاری کر دیا اور اپنے بندوں پر تخفیف بھی کی۔ (یعنی لوگ پڑھیں گے پانچ نمازیں اور انھیں ثواب پچاس کا ملے گا)۔” سیدنا انس رضی اللہ عنہ سے مروی یہ حدیث پہلے کتاب الصلاۃ میں بھی گزر چکی ہے اور ان میں سے ایک روایت کے آخر میں جو باتیں ہیں وہ دوسری روایت میں نہیں ملتیں۔

    صحیح بخاری
    معراج کا قصہ۔۔


  2. Report bad ads?
  3. #2
    MazharShafiq's Avatar
    Join Date
    Sep 2016
    Location
    Pakistan
    Gender
    Male
    Religion
    Islam
    Posts
    980
    Threads
    55
    Reputation
    1002
    Rep Power
    21
    Likes (Given)
    70
    Likes (Received)
    215

    Re: معراج کا قصہ۔۔

    اچھے برتاؤ کا سب زیادہ مستحق کون ہے؟

    سیدنا ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ ایک شخص رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس آیا اور دریافت کیا کہ میری بھلائی اور حسن معاملہ کا سب سے زیادہ مستحق کون ہے؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: “ تیری ماں” ۔ اس نے پھر پوچھا کہ اس کے بعد؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: “ پھر بھی تیری ماں” ۔ اس نے چوتھی مرتبہ پوچھا کہ اس کے بعد؟ تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: “ پھر تیرا باپ۔”

    صحیح بخاری
    معراج کا قصہ۔۔



  4. Hide
Hey there! معراج کا قصہ۔۔ Looks like you're enjoying the discussion, but you're not signed up for an account.

When you create an account, we remember exactly what you've read, so you always come right back where you left off. You also get notifications, here and via email, whenever new posts are made. And you can like posts and share your thoughts. معراج کا قصہ۔۔
Sign Up

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •  
create